Luke 1

Inasmuch as many have undertaken to compile a narrative of the things that have been accomplished among us,

2 just as those who from the beginning were eyewitnesses and ministers of the word have delivered them to us,

3 it seemed good to me also, having followed all things closely for some time past, to write an orderly account for you, most excellent Theophilus,

4 that you may have certainty concerning the things you have been taught.

5 In the days of Herod, king of Judea, there was a priest named Zechariah, of the division of Abijah. And he had a wife from the daughters of Aaron, and her name was Elizabeth.

6 And they were both righteous before God, walking blamelessly in all the commandments and statutes of the Lord.

7 But they had no child, because Elizabeth was barren, and both were advanced in years.

8 Now while he was serving as priest before God when his division was on duty,

9 according to the custom of the priesthood, he was chosen by lot to enter the temple of the Lord and burn incense.

10 And the whole multitude of the people were praying outside at the hour of incense.

11 And there appeared to him an angel of the Lord standing on the right side of the altar of incense.

12 And Zechariah was troubled when he saw him, and fear fell upon him.

13 But the angel said to him, “Do not be afraid, Zechariah, for your prayer has been heard, and your wife Elizabeth will bear you a son, and you shall call his name John.

14 And you will have joy and gladness, and many will rejoice at his birth,

15 for he will be great before the Lord. And he must not drink wine or strong drink, and he will be filled with the Holy Spirit, even from his mother’s womb.

16 And he will turn many of the children of Israel to the Lord their God,

17 and he will go before him in the spirit and power of Elijah, to turn the hearts of the fathers to the children, and the disobedient to the wisdom of the just, to make ready for the Lord a people prepared.”

18 And Zechariah said to the angel, “How shall I know this? For I am an old man, and my wife is advanced in years.”

19 And the angel answered him, “I am Gabriel. I stand in the presence of God, and I was sent to speak to you and to bring you this good news.

20 And behold, you will be silent and unable to speak until the day that these things take place, because you did not believe my words, which will be fulfilled in their time.”

21 And the people were waiting for Zechariah, and they were wondering at his delay in the temple.

22 And when he came out, he was unable to speak to them, and they realized that he had seen a vision in the temple. And he kept making signs to them and remained mute.

23 And when his time of service was ended, he went to his home.

24 After these days his wife Elizabeth conceived, and for five months she kept herself hidden, saying,

25 “Thus the Lord has done for me in the days when he looked on me, to take away my reproach among people.”

26 In the sixth month the angel Gabriel was sent from God to a city of Galilee named Nazareth,

27 to a virgin betrothed to a man whose name was Joseph, of the house of David. And the virgin’s name was Mary.

28 And he came to her and said, “Greetings, O favored one, the Lord is with you!”

29 But she was greatly troubled at the saying, and tried to discern what sort of greeting this might be.

30 And the angel said to her, “Do not be afraid, Mary, for you have found favor with God.

31 And behold, you will conceive in your womb and bear a son, and you shall call his name Jesus.

32 He will be great and will be called the Son of the Most High. And the Lord God will give to him the throne of his father David,

33 and he will reign over the house of Jacob forever, and of his kingdom there will be no end.”

34 And Mary said to the angel, “How will this be, since I am a virgin?”

35 And the angel answered her, “The Holy Spirit will come upon you, and the power of the Most High will overshadow you; therefore the child to be born will be called holy—the Son of God.

36 And behold, your relative Elizabeth in her old age has also conceived a son, and this is the sixth month with her who was called barren.

37 For nothing will be impossible with God.”

38 And Mary said, “Behold, I am the servant of the Lord; let it be to me according to your word.” And the angel departed from her.

39 In those days Mary arose and went with haste into the hill country, to a town in Judah,

40 and she entered the house of Zechariah and greeted Elizabeth.

41 And when Elizabeth heard the greeting of Mary, the baby leaped in her womb. And Elizabeth was filled with the Holy Spirit,

42 and she exclaimed with a loud cry, “Blessed are you among women, and blessed is the fruit of your womb!

43 And why is this granted to me that the mother of my Lord should come to me?

44 For behold, when the sound of your greeting came to my ears, the baby in my womb leaped for joy.

45 And blessed is she who believed that there would be a fulfillment of what was spoken to her from the Lord.”

46 And Mary said, “My soul magnifies the Lord,

47 and my spirit rejoices in God my Savior,

48 for he has looked on the humble estate of his servant. For behold, from now on all generations will call me blessed;

49 for he who is mighty has done great things for me, and holy is his name.

50 And his mercy is for those who fear him from generation to generation.

51 He has shown strength with his arm; he has scattered the proud in the thoughts of their hearts;

52 he has brought down the mighty from their thrones and exalted those of humble estate;

53 he has filled the hungry with good things, and the rich he has sent away empty.

54 He has helped his servant Israel, in remembrance of his mercy,

55 as he spoke to our fathers, to Abraham and to his offspring forever.”

56 And Mary remained with her about three months and returned to her home

57 Now the time came for Elizabeth to give birth, and she bore a son.

58 And her neighbors and relatives heard that the Lord had shown great mercy to her, and they rejoiced with her.

59 And on the eighth day they came to circumcise the child. And they would have called him Zechariah after his father,

60 but his mother answered, “No; he shall be called John.”

61 And they said to her, “None of your relatives is called by this name.”

62 And they made signs to his father, inquiring what he wanted him to be called.

63 And he asked for a writing tablet and wrote, “His name is John.” And they all wondered.

64 And immediately his mouth was opened and his tongue loosed, and he spoke, blessing God.

65 And fear came on all their neighbors. And all these things were talked about through all the hill country of Judea,

66 and all who heard them laid them up in their hearts, saying, “What then will this child be?” For the hand of the Lord was with him.

67 And his father Zechariah was filled with the Holy Spirit and prophesied, saying,

68 “Blessed be the Lord God of Israel, for he has visited and redeemed his people

69 and has raised up a horn of salvation for us in the house of his servant David,

70 as he spoke by the mouth of his holy prophets from of old,

71 that we should be saved from our enemies and from the hand of all who hate us;

72 to show the mercy promised to our fathers and to remember his holy covenant,

73 the oath that he swore to our father Abraham, to grant us

74 that we, being delivered from the hand of our enemies, might serve him without fear,

75 in holiness and righteousness before him all our days.

76 And you, child, will be called the prophet of the Most High; for you will go before the Lord to prepare his ways,

77 to give knowledge of salvation to his people in the forgiveness of their sins,

78 because of the tender mercy of our God, whereby the sunrise shall visit us[h] from on high

79 to give light to those who sit in darkness and in the shadow of death, to guide our feet into the way of peace.”

80 And the child grew and became strong in spirit, and he was in the wilderness until the day of his public appearance to Israel.

لوقا 1

1 معزّز تھیفلس کئی لوگوں نے کوشش کی ہے کہ ہم میں پیش آئے ہوئے واقعات کو ترتیب دیں۔ 2 یہی باتیں ان لوگوں کی معر فت بتائی گئیں اور لکھی گئیں جن واقعات کو ہم نے کچھ دوسرے لوگوں سے سنا اور سیکھا جنہوں نے ابتدا میں ان کو اپنی آنکھوں سےدیکھا اور لوگوں تک خدا کا پیغام پہنچا کر ان کا خادم ہوا۔ 3 چونکہ میں نے خود ابتدا سے ہی تحقیق کر کے ترتیب سے لکھا اور انہیں تمہارے سامنے کتابی شکل میں تر تیب سے پیش کررہا ہوں۔ 4 تم واضح طور سے جان جاؤگے کہ جو تعلیم تمہیں دی گئی ہے وہ سچی ہے۔

5 باد شاہ ہیرودیس تب یہوداہ پر حکومت کرر ہے تھے وہاں ز کریا نامی ایک کاہن تھے۔ اور زکریا ا بیاّ ہ انہیں کے گروہ سے تھا۔ز کریا کی بیوی ہارون کے خاندان سے تھی۔ اور اس کا نام الیشبع (الیز ابت )تھا۔ 6 زکریا اور الیشبع دونوں حقیقت میں خدا کی نظر میں بہت اچھے تھے۔ وہ ہمیشہ خدا کے تمام احکا مات کی ا طا عت کر نے والے تھے اور وہ غلطیوں سے پاک صاف تھے۔ 7 ان کی اولاد نہ تھی۔ اور الیشبع بانجھ تھی اور وہ دونوں بہت معمر تھے۔

8 ایک مرتبہ جب اسکے گروہ کی باری آئی توزکریا خدا کی خدمت بطور کاہن انجام دے رہے تھے۔ 9 کاہن لوگ عود جلا نے کیلئے انکے رسم ورواج کے مطا بق قرعہ ڈال کر ایک کاہن کا انتخاب کرتے تھے۔اس مرتبہ زکریا کا نام نکلا۔اس وجہ سے زکریاخوشبو جلا نے کے لئے ہیکل میں چلے گئے۔ 10 باہر لوگوں کی بڑی بھیڑ تھی۔ عود جلا تے وقت وہ دعا کر رہے تھے۔

11 اس وقت عود پیش کر نے کے دوران داہنی جانب خدا وند کا ایک فرشتہ زکریا کے سامنے ظاہر ہوا۔ 12 خداوند کے فرشتے کو دیکھ کر زکریا سہم گئے اور ان پر دہشت چھا گئی۔ 13 لیکن فرشتہ نے ان سے کہا ، “اے زکریا مت ڈر تیری دعا خدا نے سن لی اور تیری بیوی الیشبع ایک لڑکے کو جنم دے گی۔ اور تو اسے یوحناّ کا نام دینا۔ 14 اور اس کی پیدائش سے تمہیں خوشی ومسرت ہوگی اور کئی لوگ بھی خوش ہوں گے۔ 15 خداوند کی نظر میں یوحناّ ایک عظیم آدمی ہوگا۔ وہ نہ مئے پئے گا اور نہ ہی شراب ، حتیٰ کے پیدا ئش کے وقت سے ہی روح القدس سے بھرے ہوئے ہوں گے۔

16 وہ کئی یہودیوں کوخداوند جو ان کا خدا ہے کی طرف رجوع ہو نے میں مدد کرے گا۔ 17 وہ پہلے خداوند کے سامنے پیامبر کے طور سے جا ئے گا اس کے پاس روح اور ایلیاہ کی قوت ہو گی وہ باپ اور بیٹوں کے درمیان سلامتی لا ئے گا۔کئی نا فرمانوں کو تقوٰی کی راہ پر چلا ئے گا اور لوگوں کو خداوند کی آمد کے لئے تیار کرے گا۔”

18 زکریا نے فرشتے سے کہا ، “میں کیسے جانوں کہ جو تو کہہ رہا ہے وہ سچ ہے میں تو بوڑھا ہو گیا ہوں اور میری بیوی بھی بوڑھی ہے۔”

19 فرشتے نے جواب دیا “میں جبرائیل ہوں میں ہمیشہ خدا کے حضور کھڑا رہتا ہوں خدا نے مجھے تیرے پاس کلا م کر نے کیلئے بھیجا ہے کہ تجھے ان باتوں کی خوشخبری دوں۔ 20 اب سن تو اپنی تقریر کھو دے گا اور تو اس دن تک بات نہیں کرے گا جب تک یہ چیزیں ہو نہ جا ئیں کیوں کہ تو نے میری باتوں پر یقین نہ کیا لیکن میری باتیں پوری ہوں گی۔

21 لوگ زکریا کا انتظار کر رہے تھے اور حیرت کر نے لگے کہ ہیکل سے باہر نکلنے میں اس کو اتنی تاخیر کیوں ہو رہی ہے۔ 22 جب زکریا باہر آئے تو وہ ان سے بات نہیں کر سکے تو لوگوں نے یہ سمجھ کر کہ شاید انہوں نے ہیکل میں خواب دیکھا ہوگا وہاں کھڑے رہے کیوں کہ وہ اشارہ کرتا تھا اور بولتا نہیں تھا۔ 23 بحیثیت کا ہن اس کی ملازمت کا دور مکمل ہوازکریا اپنے گھر کو لوٹا۔

24 تب ایسا ہو ا کہ زکریا کی بیوی الیشبع حاملہ ہو گئی لیکن وہ پانچ ماہ تک اپنے گھر سے باہر نہ گئی۔ 25 الیشبع نے کہا، “دیکھو خدا نےمیری کیسی طرفداری کی کہ مجھے بچے نہ ہو نے سے لوگوں کے سامنے جو شر مندگی تھی اس کو اس نے دور کردیا۔”

26 ۔ 27 الیشبع جب چھ ماہ کی حاملہ تھی تو خدا نے اپنے فرشتے جبرائیل کو گلیل شہر کے ایک گاؤں ناصرت میں رہنے والی ایک پاک دامن کنواری لڑ کی کے پاس بھیجا جس کی داؤد کے خاندان کے ایک یوسف نامی آدمی سے سگائی ہوئی تھی اور اس کا نام مریم تھا۔ 28 فرشتہ نے اس کے پاس آکر کہا ، “سلام! تجھ پر خدا کا فضل و کرم ہو یہ بات مبارک ہو کہ خدا تیرے ساتھ ہے۔”

29 فرشتہ کی بات سن کر مریم بہت پریشان ہوئی، “سلام کے کیا معنی ہیں؟۔”

30 فرشتے نے اس سے کہا، “اے مریم خوفزدہ مت ہو خدا تجھ پر بہت زیادہ فضل کرے گا۔ 31 سن لے! توحاملہ ہو کر ایک لڑ کے کو جنم دے گی تجھے اس کا نام “یسوع” رکھنا ہو گا۔ 32 وہ ایک عظیم آدمی بنے گا اور لوگ اس کو خدا ئے تعالیٰ کا بیٹا کہیں گے خداوند خدا ان کو انکے اجداد داؤد کا اختیار دے گا۔ 33 یسوع بادشاہ کی طرح یعقوب کی رعایا پر ہمیشہ حکمرانی کریں گے۔ اور اس کی بادشاہت کبھی ختم ہو نے والی نہ ہو گی۔”

 

34 مریم نے فرشتہ سے کہا، “یہ کیسے ممکن ہے میں تو شا دی شدہ نہیں ہوں؟”

35 فرشتہ نے مریم سے کہا ، “روح ا لقدس تجھ پر آئیگا اعلیٰ ترین خدا کی طاقت تجھے گھیر لے گی اسی لئے مقدس بچہ پیدا ہو نے والا خدا کا بیٹا کہلا ئیگا۔ 36 اس کے علاوہ تیری قرابت دار الیشبع بھی حاملہ ہے وہ بہت عمر رسیدہ ہے اور وہ مرد بچے کو جنم دے گی وہ عورت بانجھ کہلا تی تھی اب چھ ماہ کی حاملہ ہے۔ 37 خدا کے لئے کو ئی بات نا ممکن نہیں ہے۔”

38 مریم نے کہا ، “میں خدا کی خادمہ ہوں اور جیسا تو نے کہا ہے ویسا ہی میرے لئے ہو نے دے “تب فرشتہ وہا ں سے چلا گیا۔

39 اس کے بعد جلدی مریم اٹھی ا ور یہوداہ کے پہاڑی علا قے میں ایک گاؤں کی طرف چلی گئی۔ 40 وہ زکریا کے گھر گئی اور الیشبع کو سلام کی۔ 41 جب الیشبع نے مریم کا سلام سنا تو اس کے پیٹ کا بچہ مچلنے لگا۔تب الیشبع رُو ح القدس سے بھر پور ہوئی۔

42 تب وہ اونچی آواز میں بولی، “خدا نے تجھ کو دیگر تمام عورتوں سے بڑی فضلیت بخشی ہے اور تجھ سے پیدا ہو نے والا بچہ بھی فضلیت والا ہوگا۔ 43 میرے ساتھ یہ کیسا ماجرا ہوا کہ میرے خداوند کی ما ں مجھ سے ملنے آ ئی ہے میں کتنی خوش نصیب ہوں کہ میرے خداوند کی ماں مجھ سے ملنے آئی ہے۔ 44 جیسے ہی تیرے سلام کی آواز میرے کانوں تک پہنچی تو میرے پیٹ کا بچہ خوشی سے مچل گیا۔ 45 تم پر فضل ہوا کیوں کہ تمہارا ایمان ہے کہ خداوند نے تم سے جو کہا ہے وہ پورا ہو کر رہے گا۔”

46 تب مریم نے کہا۔

47 “میری جان خدا وند کی حمدوثنا کرتی ہے۔

میرا دل خوش ہے کیوں کہ خدا میرا نجات دہندہ ہے۔

48 خدا نے اپنی مہر بانی میرے لئے،

اس خدمت گذار لڑ کی کیلئے دکھا ئی ہے۔

تمام لوگ آج سے مجھے کہیں گے

کہ مجھ پر فضل ہوا ہے۔

49 کیوں کہ وہ جو قدرت والا ہے میرے لئے عظیم کام کیا ہے

اوراس کا نام بہت مقدس ہے۔

50 جو لوگ خدا سے ڈرتے ہیں ان لوگوں پر نسل در نسل اس کا رحم و کرم رہتا ہے۔

51 اس نے اپنی قوت بازو دکھا کر مغروروں کو منتشر کردیا

اور ان کے منصوبوں کو جو ان کے دماغوں میں تھے نیست ونابود کر دیا۔

52 خد ا بڑے بڑے حاکموں کو تخت سے نیچے اتار دیا ہے

اور عاجزوں کو اوپر اٹھایا ہے۔

53 وہ بھوکوں کو مطمئن کیاہے

اور دولتمندوں کو خالی ہاتھ لوٹایا ہے۔

54 خدا نے اپنی خدمت کے لئے چنے ہوئے بنی اسرائیلیوں کی مدد کی ہے

اسنے ہم لوگوں پر رحم کر نے کے اپنے وعدے کو نہیں بھولا۔

55 خدا نے ہمیشہ وہی کیا ہے جو وعدہ اس نے ہما رے آباء و اجدا د، ابراہیم اور انکی اولادوں کے ساتھ کیا تھا۔”

56 مریم تقریباً تین ماہ تک الیشبع کے ساتھ رہی پھر اپنے گھر واپس لوٹی۔

57 الیشبع کے وضع حمل کا وقت آگیا اور اس کو ایک لڑ کا پیدا ہوا۔ 58 خدا کی اس پر جو مہر بانی ہوئی اس کے پڑوسیوں نے اور اس کے رشتہ داروں نے دیکھا۔ اور وہ سب اس کے ساتھ خوشی میں شامل ہوئے۔

59 بچہ جب آٹھ دن کا ہوا تو وہ ختنہ کے لئے آئے اور وہ اس بچہ کا نام زکریا رکھنا چاہتے تھے کیوں کہ وہی بچے کے باپ کا نام تھا۔ 60 لیکن بچے کی ماں نے کہا، “نہیں اس کا نام ’یوحناُ‘ رکھنا چاہئے۔”

61 لوگوں نے الیشبع سے کہا،“تیرے خاندان میں یہ نام تو کسی کا نہیں ہے۔” 62 تب وہ اس کے باپ کو اشارہ کر کے پوچھا کہ “تم اس کا کیا نام رکھنا چاہتے ہو؟”

63 تب ز کریا اشارہ کر کے ایک تختی منگایا اور لکھا کہ “اس کا نام یو حنّا” ہے۔ سب لوگوں کو بڑی حیرت ہوئی۔ 64 اسی وقت سے ز کریا دوبارہ پھر باتیں کر نے لگا اور خدا کی تعریف شروع کی۔ 65 یہ سب سن کر پڑوسیوں کو خوف ہوا یہوداہ کے پہاڑی علا قے میں لوگ اس واقعہ کے بارے میں آپس میں گفتگو کر نے لگے۔ 66 اس واقعہ کو سننے والے تما م لوگ متا ثر ہوئے اور کہا ، “یہ لڑکا بڑا ہو نے کے بعد نبی بنیگا؟ کیوں کہ خدا اس بچے کے ساتھ تھا۔

67 تب یوحناّ کاباپ زکریا روح القدس سے معمور نبی کی طرح کہا۔

68 “اسرائیل کے خداوند خدا کی تعریف ہو

اس نے آکر اپنے لوگوں کو چھٹکارا دلایا ہے۔

69 اور اپنے خادم داؤد کے گھرا نے میں

ہمارے لئے نجات کا سینگ نکالا۔

70 خدا نے کہا اس بات کو کر نے کا وعدہ

اس نے اپنے مقد س نبیوں کے ذر یعے بہت پہلے کیا ہے۔

71 خدا نے ہم کو ہمارے دشمنوں سے

اور ہم سے نفرت کرنے والے لوگوں سے بچایا ہے۔

72 اپنے رحم کو ظاہر کر نے کے لئے

ہمارے آباء واجداد سے کئے ہو ئے اپنے مقدس وعدے کو اس نے یا دکیاہے۔

73 خدا نے ہمارے آباء واجداد میں ابراہیم کو قسم کے ساتھ وعدہ کیا ہے کہ وہ ہم کو ہمارے دشمنوں کی گرفت سے چھڑا ئیگا۔

74-75     کیوں کہ اس کا منشاء ہے کہ ہم اس کی خدمت بلا خوف پرہیز گاری

اور پاکبا زی کے ساتھ ساری زندگی گذاریں۔”

76 اے لڑ کے “تو خدا ئے تعالیٰ کا نبی کہلا ئے گا۔

تو خداوند کے آگے لوگوں کو اس کی آمد کے لئے تیار کر نے جائیگا۔

77 تو اس کے لوگوں کو سمجھا ئے گا کہ انہیں اُن کے گناہوں کی معا فی کے ذریعے نجات دی جا ئیگی۔

78 “ہمارے خدا کے بڑے فضل وکرم کے ذریعے

آسمان سے ہمارے لئے ایک نیا دن طلوع ہوگا۔

79 اور یہ اندھیرے میں رہنے والوں کے لئے اور موت کا خوف کرنے والوں کے لئے چمکے گا

وہ ہمیں سلا متی کا راستہ بتائے گا۔”

80 وہ لڑ کا بڑا ہو رہا تھا اور بڑی روحانی طور پر قوت مند ہو رہاتھا۔ یوحناّ اسرائیلیوں کے سامنے کھلے عام آنے تک لوگوں سے دور جنگلوں میں رہتا تھا۔

路加福音 1

提阿非羅大人哪,有好些人提筆作書,述說在我們中間所成就的事,是照傳道的人從起初親眼看見又傳給我們的。

這些事我既從起頭都詳細考察了,就定意要按著次序寫給你, 使你知道所學之道都是確實的。

5 當猶太王希律的時候,亞比雅班裡有一個祭司,名叫撒迦利亞。他妻子是亞倫的後人,名叫伊利莎白。 6 他們二人在神面前都是義人,遵行主的一切誡命禮儀,沒有可指摘的。 7 只是沒有孩子,因為伊利莎白不生育,兩個人又年紀老邁了。

8 撒迦利亞按班次在神面前供祭司的職分, 9 照祭司的規矩掣籤,得進主殿燒香。 10 燒香的時候,眾百姓在外面禱告。 11 有主的使者站在香壇的右邊向他顯現。 12 撒迦利亞看見,就驚慌害怕。 13 天使對他說:「撒迦利亞,不要害怕,因為你的祈禱已經被聽見了。你的妻子伊利莎白要給你生一個兒子,你要給他起名叫約翰。 14 你必歡喜快樂,有許多人因他出世也必喜樂。 15 他在主面前將要為大,淡酒濃酒都不喝,從母腹裡就被聖靈充滿了。 16 他要使許多以色列人回轉,歸於主他們的神。 17 他必有以利亞的心志能力,行在主的前面,叫為父的心轉向兒女,叫悖逆的人轉從義人的智慧,又為主預備合用的百姓。」 18 撒迦利亞對天使說:「我憑著什麼可知道這事呢?我已經老了,我的妻子也年紀老邁了。」 19 天使回答說:「我是站在神面前的加百列,奉差而來對你說話,將這好信息報給你。 20 到了時候,這話必然應驗。只因你不信,你必啞巴,不能說話,直到這事成就的日子。」 21 百姓等候撒迦利亞,詫異他許久在殿裡。 22 及至他出來,不能和他們說話,他們就知道他在殿裡見了異象,因為他直向他們打手勢,竟成了啞巴。 23 他供職的日子已滿,就回家去了。

24 這些日子以後,他的妻子伊利莎白懷了孕,就隱藏了五個月, 25 說:「主在眷顧我的日子這樣看待我,要把我在人間的羞恥除掉。」

26 到了第六個月,天使加百列奉神的差遣往加利利的一座城去,這城名叫拿撒勒; 27 到一個童女那裡,是已經許配大衛家的一個人,名叫約瑟,童女的名字叫馬利亞。 28 天使進去,對她說:「蒙大恩的女子,我問你安,主和你同在了!」 29 馬利亞因這話就很驚慌,又反覆思想這樣問安是什麼意思。 30 天使對她說:「馬利亞,不要怕,你在神面前已經蒙恩了。 31 你要懷孕生子,可以給他起名叫耶穌。 32 他要為大,稱為至高者的兒子;主神要把他祖大衛的位給他, 33 他要做雅各家的王,直到永遠;他的國也沒有窮盡。」 34 馬利亞對天使說:「我沒有出嫁,怎麼有這事呢?」 35 天使回答說:「聖靈要臨到你身上,至高者的能力要蔭庇你。因此,所要生的聖者必稱為神的兒子。 36 況且你的親戚伊利莎白,在年老的時候也懷了男胎,就是那素來稱為不生育的,現在有孕六個月了。 37 因為出於神的話,沒有一句不帶能力的。」 38 馬利亞說:「我是主的使女,情願照你的話成就在我身上!」天使就離開她去了。

39 那時候,馬利亞起身急忙往山地裡去,來到猶大的一座城, 40 進了撒迦利亞的家,問伊利莎白安。 41 伊利莎白一聽馬利亞問安,所懷的胎就在腹裡跳動,伊利莎白且被聖靈充滿, 42 高聲喊著說:「你在婦女中是有福的!你所懷的胎也是有福的! 43 我主的母到我這裡來,這是從哪裡得的呢? 44 因為你問安的聲音一入我耳,我腹裡的胎就歡喜跳動。 45 這相信的女子是有福的!因為主對她所說的話都要應驗。」

46 馬利亞說:「我心尊主為大, 47 我靈以神我的救主為樂, 48 因為他顧念他使女的卑微。從今以後,萬代要稱我有福, 49 那有權能的為我成就了大事,他的名為聖! 50 他憐憫敬畏他的人,直到世世代代。 51 他用膀臂施展大能,那狂傲的人正心裡妄想就被他趕散了。 52 他叫有權柄的失位,叫卑賤的升高; 53 叫飢餓的得飽美食,叫富足的空手回去。 54 他扶助了他的僕人以色列, 55 為要記念亞伯拉罕和他的後裔,施憐憫直到永遠,正如從前對我們列祖所說的話。」

56 馬利亞和伊利莎白同住約有三個月,就回家去了。

57 伊利莎白的產期到了,就生了一個兒子。 58 鄰里親族聽見主向她大施憐憫,就和她一同歡樂。 59 到了第八日,他們來要給孩子行割禮,並要照他父親的名字叫他撒迦利亞。 60 他母親說:「不可,要叫他約翰。」 61 他們說:「你親族中沒有叫這名字的。」 62 他們就向他父親打手勢,問他要叫這孩子什麼名字。 63 他要了一塊寫字的板,就寫上說:「他的名字是約翰。」他們便都稀奇。 64 撒迦利亞的口立時開了,舌頭也舒展了,就說出話來,稱頌神。 65 周圍居住的人都懼怕。這一切的事就傳遍了猶太的山地。 66 凡聽見的人都將這事放在心裡,說:「這個孩子將來怎麼樣呢?」因為有主與他同在。

67 他父親撒迦利亞被聖靈充滿了,就預言說: 68 「主以色列的神是應當稱頌的!因他眷顧他的百姓,為他們施行救贖, 69 在他僕人大衛家中,為我們興起了拯救的角, 70 正如主藉著從創世以來聖先知的口所說的話, 71 拯救我們脫離仇敵和一切恨我們之人的手; 72 向我們列祖施憐憫、記念他的聖約, 73 就是他對我們祖宗亞伯拉罕所起的誓, 74 叫我們既從仇敵手中被救出來, 75 就可以終身在他面前,坦然無懼地用聖潔、公義侍奉他。 76 孩子啊,你要稱為至高者的先知,因為你要行在主的前面,預備他的道路, 77 叫他的百姓因罪得赦就知道救恩。 78 因我們神憐憫的心腸,叫清晨的日光從高天臨到我們, 79 要照亮坐在黑暗中死蔭裡的人,把我們的腳引到平安的路上。」

80 那孩子漸漸長大,心靈強健,住在曠野,直到他顯明在以色列人面前的日子。